پاکستان کے حکمرانوں کی ناکام خارجہ پالیسیوں اور سفارتی کوششوں کا نتیجہ ہے کہ بھارت کو کوئی پوچھنے والا نہیں ہے، محمد غالب

برمنگھم تحریک کشمیر یورپ کے صدر محمد غالب نے امرتسر میں افغانستان کے حوالے سے منعقدہ ہارٹ آف ایشیا کانفرنس کے مشترکہ اعلامیے اور بھارتی حکومت نے پاکستان کے وفد کے ساتھ جو طرز عمل اور توہین آمیز رویہ اختیار کیا اس پر اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نریندر مودی نے جو کچھ کیا وہ پاکستان کے لعمہ فکریہ ہے کہ بھارت کے ساتھ تعلاقت پر نظر ثانی کی جائے بھارت نے پاکستان کے بیس کروڑ عوام کے وقار کو مجروح کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے ڈر کے مارے کہ بھارت کہیں ناراض نہ ہوجائے کشمیر کا کہیں نام بھی نہیں لیا اس باوجود بھی بھارت کے حکمران پاکستان کی شرکت کو برداشت نہیں کرسکے مشیر خارجہ کے سات اس طرح کا سلوک نا قابل برداشت ہونا چاہیے تھا مگر وزیر اعظم پاکستان نے اس پر بھی خاموشی اختیار کر رکھی ہے کسی قسم کا کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ کانفرنس کے مشترکہ اعلامیے میں دہشت گردی کے خلاف مشترکہ کوششوں کا اعلان کی گیا مگر کسی کو یہ جرات نہیں ہوئی کہ مقبوضہ کشمیر میں گذشتہ پانچ ماہ سے جو قتل عام اور ظلم ہو رہا ہے لوگوں کو اندھا کیا جارہا اس کے خلاف کوئی نام بھی لے سکے پاکستان کے اندر بھارتی دہشت گردی کے پاکستان کے پاس ثبوت بھی ہیںجو پیش نہیں کیے گے اور کنٹرول لائن پر بھارت کی جارحیانہ کاروائیاںبھی دنیا کے سامنے ہیں مگر کسی نے کوئی آواز بلند نہیں کی۔ محمد غالب نے کہ کہ پاکستان کے حکمرانوں کی ناکام خارجہ پالیسیوں اور سفارتی کوششوں کا نتیجہ ہے کہ بھارت کو کوئی پوچھنے والا نہیں ہے بھارت نے الٹا پاکستان کے خلاف دہشت گردی کے الزامات کی ایک فہرست جارہی کی اور اور پاکستان کے مشیر خارجہ کو میڈیا سے گفتگو کرنے کی اجازت نہیں دی گی اور افغانستان کے صدر نے بھی بھارت کی بولی میں پاکستان کو نشانہ بنایا اور اس کانفرنس کو پاکستان کے خلاف استعمال کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *